طوطا بول پڑا – آغا وقار احمد کا تجزیہ

AGHA-WAQAR-AHMED

:لاہور

آشیانہ اقبال ہاؤسنگ سوسائٹی کا ٹھیکہ بسم اللہ انجیئنرنگ کمپنی کا دیا گیا تھا۔ انجیئنرنگ کمپنی کوچوتھی کیٹکگری ہونےکے باوجود 14 ارب روپے کا ٹھیکہ دیا گیا۔ احد چیمہ کی 32 کنال اراضی کی ادائیگی کاسا کے اکاؤنٹ سے کی گئی تھی۔  نیب  لاہور نے آشیانہ سکینڈل مزید پیش رفت کر لی ہے۔ جس سلسلے میں شاھد شفیق کو گرفتار کر لیا ہے جن کو احد چیمہ کی نشاندہی پر گرفتار کیا گیا ہے۔ شاھد شفیق پیراگون سوسائٹی کے چیف ایگزکٹیو ندیم ضیا کے بھائی ہیں اس لیےطوطا  بول پڑا ہے۔ اب دیکھیں رات گئے تک کتنی گرفتاریاں مزید ہوتی ہیں۔

کہتے ہیں طوطے کی دو قسمیں ہوتی ہیں، ایک گانی والا طوطا اور ایک را طوطا۔ گانی والا جو طوطا ہوتا ہے نہ وہ بہت جلد لفظ سیکھ لیتا ہے اور بولتا ہے لیکن را طوطا کو سیکھانا تھوڑا مشکل ہوتا ہے اور بولنا سکھانا بھی مشکل ہوتا ہے۔ لیکن یہ احد چیمہ صاحب  تو جس قدر نازک مزاج ہیں اس قدر نازک ان کے بیان بھی ہیں اور وہ گانی والے طوطے کی طرح فٹافٹ بول پڑے تو یہ کہنے میں اُجرت محسوس نہیں کروں گا کہ طوطا بول پڑا۔ ابھی دو دن ہی ہوئے ہیں نیب کے حوالات میں گئےاور مار کا ابھی آغاز ہی ہوا چاہتا ہےکہ طوطے نے راز اگلنا شروع کر دیئے۔ پیراگون سٹی اس کے اکاؤنٹس  زمینیں کیسے خریدیں گئیں اس میں کس کس کا کیا دلچسپی تھی کون کون ملوث تھا تمام بتانا شروع کر دیا اس سلسلے  میں نیب نے لاہور میں مزید گرفتاریاں کیں اور امید کی جاتی ہےکہ آج رات بہت سے کرپٹ افراد اپنے گھروں میں نہیں سوئیں گے کیونکہ طوطا بول پڑا ہے۔

جواب چھوڑ دیں

Please enter your comment!
Please enter your name here