!کوئی این آر او نہیں ہونے جا رہا

No NRO is going to happen
No NRO is going to happen

لاہور:

سعودی عرب میں مالی بے ضابطگیوں کے سلسلے میں بلاتفریق ایک انقلابی اقدام کیا گیا ہے اور جس کی زد میں جہاں بڑے بڑے کاروباری حضرات شاہی خاندان کے افراد اور کچھ شہزادے بھی ملوث پائے گئے وہیں پر شریف خاندان کے نام بھی موجود ہیں، بالخصوص نواز شریف کا نام شریف خاندان کے سرغنہ کی حیثیت سے لیا جا ریا ہے۔ اس سلسلے میں خصوصی طیارہ بھیجا گیا کیونکہ شہباز شریف نے امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے داماد کی سفارش پر سعودی شاہ سلمان سے ملاقات کا وقت لیا تاکہ وہ سعودی عرب میں ہونے والی مالی بےضابطگیوں کے سلسلے میں نواز شریف کے مقدمے کی پیروی کر سکیں اور امید کی جاتی ہے کہ شہباز شریف شاہ سلمان سے مل کر اس تحقیقات میں نواز شریف کا نام نکلوانے میں کامیاب ہو جائیں گے۔ عین ممکن ہے کہ اس سلسے میں نواز شریف، مریم نواز، حسن نواز اور حسین نواز بھی فوری طور پر سعودی عرب پہنچیں۔

شریف خاندان کا سعودی عرب جانے کا فیصلہ سعودی سفیر کی اس یقین دہانی کے بعد ہوا کی ان کو وہاں گرفتار نہیں کیا جائے گا اور اس ملاقات کی سلسلے میں امریکہ میں مقیم شیخ سعید کا رول انتہائی اہمیت رکھتا ہے، اس کی وجہ اس کے ذاتی مراسم ٹرمپ کے داماد سے ہیں۔

سعودی حکومت کے مطالبے کے مطابق اسحاق ڈار کو سعودی عرب میں لایا جائے تو اس بات میں کوئی بعید نہیں کہ چند دنوں میں سعودیہ تشریف لے جائیں ۔

پاکستانی عوام اس ملاقات کو ایک این آر او تصور کر رہے ہیں جب کے حقیقت اس کے برعکس ہے۔

ہم نے5 دسمبر کر ان مالی بے ضابطگیوں سے آگاہ کر دیا تھا جس کو آپ یہاں ملاحظہ کر سکتے ہیں۔

نوازشریف، شرم تم کو مگر نہیں آتی

1 تبصرہ

جواب چھوڑ دیں

Please enter your comment!
Please enter your name here