کشمالہ طارق کے کرشمے

Kashmala Tariq charisma
Kashmala Tariq charisma

:لاہور

حال ہی میں سینئر صحافی مطیع اللہ جان کے ساتھ انٹرویو کے دوران کشمالہ طارق نے بدتمیزی کی جس کے کلپ میں اس تحریر کے ساتھ لگا رہا ہوں اور میں شکر گزار ہوں  دوستوں کا جنہوں نے مجھے یہ کلپ مہیا کیے، اسے غور سے دیکھیں آپ کو اس عورت کی اوقات نظر آ جائے گی۔

کسی زمانے میں وہ کشمالہ طارق تھی اب نا جانے وہ کشمالہ کیا ہے، کشمالہ طارق ہے یا کشمالہ آصف ہے – یہ میں قارئین پر چھوڑتا ہوں۔

کشمالہ طارق کا نام سیاست میں 90 کی دہائی کے آخر میں لیا جانا شروع ہوا اور دیکھتے ہی دیکھتے سیاست کی وہ منزلیں بھی پار کر گئیں جو کئی سالوں سے سیاسی دنیا میں رہنے والی حقیقی سیاسی، محنت کش اور عوامی ورکرز حاصل نہیں کر سکیں جو کہ کشمالہ نے دنوں میں حاصل کیں اور دوسرے الفاظ میں اس نے ترقی کی منزلیں تیزی سے تہہ کیں اور اس کے پیچھے چُھپے جو راز تھے وہ مختلف اوقات میں منظرِ عام پر آتے رہے لیکن صحافیوں کی جرات نہیں ہوئی کہ اس پر کھل کر لکھ سکیں مگر میں یہ لفظ تحریر کرنے میں ہچکچاہٹ محسوس نہیں کروں گا  کہ کشمالہ طارق کا کرشمہ اس کا حسن ہے جس سے وہ پرویز مشرف کی قربت میں گئیں اور ایک اہم سیاسی عہدہ ملا اور آج بھی وہ پاکستان مسلم لیگ ن کی قربت میں ہے اور انہیں ایک اہم سرکاری عہدہ ملا ہے۔

اس کی تعلیمی قابلیت کیا ہے، یہ آپ اس انٹرویو کو دیکھ کر اندازہ لگا سکتے ہیں اور اس کا ترقی کا راز کیا ہے یہ بھی آپ کو اس ویڈیو کلپ سے بخوبی اندازہ ہو جائے گا۔ جہاں عورت اپنے حسن کے زور سے ترقی کی منزلیں تہہ کرتی ہے وہاں حقیقی، محنتی اور سیاسی ورکر کی کوئی بھی حیثیت نہیں رہ جاتی اور یہی کچھ پاکستان مسلم لیگ ن کی محنتی کارکنوں کے ساتھ ہوا۔

یہ وہ سوالات ہیں جو آپ کے ذہن میں جنم لیں گے  اور خود ہی آپ اس کا جواب بھی ڈھونڈ لیں گے کہ کشمالہ طارق کا کرشمہ کیا ہے۔

کل رات ہی ریحام خان نے انکشافات کیےکہ پاکستان تحریکِ انصاف میں انہی عورتوں کو اگلی صفوں میں آنے کی اجازت ہے  یا وہ اگلی صفوں میں آ سکتی ہیں جو جسمانی طور پر سیاسی لیڈران کے ساتھ ملوث رہیں پا دوسرے الفاظ میں انہوں نے کہا کہ جنسی طور پر ہراساں کیا جاتا ہے اور وہی خواتین سیاسی پارٹیوں کی اگلی صفوں میں آتی ہیں جو جنسی طور پر ہراساں ہونے ہر سمجهوتا کر لیتی ہیں۔

جواب چھوڑ دیں

Please enter your comment!
Please enter your name here