آسیہ بی بی کو رہا کر دیا گیا، ذرائع، بیرون ملک روانہ، برطانوی ریڈیو

ASIA
ASIA

 آسیہ بی بی کو رہا کر دیا گیا، ذرائع، بیرون ملک روانہ، برطانوی ریڈیو

  نومبر 8, 2018

ملتان

سپریم کورٹ کی جانب سےبریت کے فیصلے کے بعد توہین رسالت کے الزام میں سزائےموت پانےوالی مسیحی خاتون آسیہ بی بی کوویمن جیل ملتان سےرہاکردیاگیا۔برطانوی ریڈیو کا کہنا ہے کہ آسیہ بیرون ملک روانہ ہوگئیں تاہم جونیئر افسر کا کہنا ہے کہ آسیہ کو رہا نہیں کیا گیا ۔ عدالت سے روبکارموصول ہونےکےبعدآسیہ بی بی کوگزشتہ رات سنٹرل جیل ملتان کی ویمن جیل سےرہاکیاگیا‘ اس موقع پرسخت حفاظتی انتظامات کئےگئےتھے‘روٹ بھی لگایاگیا‘جیل اورپولیس افسران رات گئےتک اس حوالےسےکچھ بھی بتانےسےانکارکرتےرہے‘سنٹرل جیل کےانتظامی افسران نےبھی رابطہ پررہائی کی روبکا رپہنچنےکی تردید کردی‘ سنٹرل جیل کےباہرسکیورٹی کاانتظام حساس ادارےکےجوانوں کےپاس تھاجووہاں گشت کر تےرہے جبکہ سکیورٹی کےحوالےسےمشق بھی کی گئی۔ ذرائع کےمطابق آسیہ کو جیل سے ملتان ایئرپورٹ لے جایاگیا اورامکان ظاہر کیا جارہا ہےکہ اسےا سلام آبادمیں غیرملکی سفارتخانےیالاہو ر میں ایک ملک کےقونصل خانےمیں منتقل کیاگیاہے۔رہائی کےموقع پررینجرز کی بھاری نفری بھی ساتھ رہی۔یہ بھی معلوم ہواہےکہ یواین کاایک وفدبھی ملتان آیاجس میں10افرادشامل تھے ہیں جن میں کچھ غیرملکی میڈیانمائندگان تھے۔ اطلاعات کےمطابق آسیہ کوجیل سےنکالتےوقت مسیحی اہلکاروں کو فرنٹ پررکھاگیااوران کے گھیرے میں آسیہ بی بی کونکالاگیاتاہم جیل حکام اس بارےمیں کچھ بھی بتانےکوتیارنہیں۔ادھر خبر پر تبصرے کیلئے کوئی متعلقہ افسر موجود نہیں تھا تاہم جونیئر افسر نے نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر خبر کو مسترد کرتے ہوئے کہا کہ آسیہ کو رہا نہیں کیا گیا ۔ دوسری جانب برطانوی نشریاتی ادارے کے مطابق آسیہ بی بی رہائی کے بعد بیرون ملک روانہ ہو گئی ہے۔ ملتان جیل سے آسیہ بی بی کو راولپنڈی کے نور خان ایئر بیس لایا گیا جہاں وہ اپنے خاندان سمیت ہالینڈ کیلئے روانہ ہو گئی ہیں۔آسیہ بی بی اور ان کے خاندان کے علاوہ پاکستان میں ہالینڈ کے سفیر بھی جہاز میں سوا

ترجمان دفتر خارجہ کے مطابق آسیہ بی بی پاکستان سے باہر نہیں گئی تمام خبریں بے بنیاد ہیں ،

اگر آسیہ ملعونہ کو واقعی

بھگایا جارہا ہے تو پھر لکھ لیں عمران خان حکومت خود اپنے پاؤں پر کلہاڑی مارے گی. دراصل اس وقت آسیہ کو جیل سے رہا نہ کرنے کا کوئی قانونی جواز حکومت کے پاس موجود نہیں ہے کیونکہ قانون کے مطابق آسیہ کو عدالت رہا کرچکی ہے اور فیصلے کے خلاف اپیل کی سماعت تک آسیہ کو جیل سے رہا کیا جاسکتا ہے. اگر حکومت اس قانونی حرام پائی کا غلط فائدہ اٹھا رہی ہے تو پھر اس حکومت کے لیے اتنا ہی کہوں گا کہ انا للہ وانا الیہ راجعون.

مجھے نہیں لگتا کہ حکومت اتنا بڑا خطرہ مول لے گی، صرف آسیہ کو ملتان جیل سے نکال کر اسلام آباد راولپنڈی جیل یا محفوظ مقام پر منتقل کیا گیا ہے، فلحال میڈیا کی الٹی سیدھی رپورٹنگ پر ہرگز یقین مت کریں.
زرایع کے مطابق آسیہ کو ملتان جیل سے سکیورٹی وجوہات کی بنیاد پر اسلام اباد منتقل کیا گیا ہے.

جواب چھوڑ دیں

Please enter your comment!
Please enter your name here