وزارت خزانہ کا قلمدان واپس

وزیر اعظم پاکستان شاہد خاقان عباسی نے بدھ کو وفاقی وزیر برائے خزانہ اسحاق ڈار کی چھٹی کی درخواست منظور کرتے ہوئے ان سے وزارت خزانہ کا قلمدان واپس لے لیا ہے۔ پاکستان مسلم لیگ کی حکومت نے چار برس کی شدید تنقید کے بعد وزارتِ خارجہ جیسے اہم قلمدان کو نواز شریف کی نااہلی کے بعد پُر کیا ہی تھا کہ خزانہ کی اہم ترین وزارتِ وزیر خزانہ پر مقدمات کی وجہ سے عملاً غیر فعال اور مفلوج ہو کر رہی گئی ہے۔ دوسری جانب ملک میں حزب مخالف سمیت مختلف حلقوں کی جانب سے حکومت پر دباؤ بڑھ رہا ہے کہ آخر کیوں یہ ایک ایسے وزیر خزانہ کو ہٹانے میں سنجیدہ نہیں جس پر منی لانڈرنگ کے الزامات ہیں اور عدالت ان کے ناقابل ضمانت ورانٹ گرفتاری جاری کر چکی ہے۔ یہاں یہ بتانا ضروری ہے کہ نواز شریف کے تینوں اقتدار میں اسحاق ڈار اہم ترین عہدوں پر فائز رہے ہیں جس میں دو بار وزیر خزانہ کا عہدہ بھی شامل ہے اور شریف خاندان سے اسی قربت کے باعث سال دو ہزار چار میں اسحاق ڈار کے بیٹے کی شادی نواز شریف کی بیٹی سے جدہ میں ہوئی کیونکہ اس وقت نواز شریف وہاں جلا وطنی کی زندگی گزار رہے تھے۔  نواز شریف کے دوسرے دورۂ اقتدار میں جب زرمبادلہ کے اکاونٹس کو منجمد کیا گیا تھا اس وقت بھی وزارتِ خزانہ کا قلمدان اسحاق ڈار کے ہاتھ ہی میں تھا۔ شریف خاندان اور اسحاق ڈار کے تعلقات جو اب قریبی رشتہ داری میں بدل چکے ہیں بہت پرانے ہیں۔

 

 

 

جواب چھوڑ دیں

Please enter your comment!
Please enter your name here